صفحۂ اول    ہمارے بارے میں    ہمارا رابطہ
پیر 23 جولائی 2018 

ایران کو مخالفانہ اقدام کی بھاری قیمت چکانی پڑے گی، امریکہ

این این آئی | جمعرات 12 جولائی 2018 

واشنگٹن (این این آئی)امریکی وزیر خارجہ مائیک پومپیو نے ایران کو خبردار کیا ہے کہ اگر اس نے مشرقِ اوسط کے تیل کی برآمدات میں رخنہ ڈالنے کی کوشش کی تو اس کو ایسے اقدامات کی بھاری قیمت چکانا پڑے گی۔ متحدہ عرب امارات کے مختصر دورے کے موقع پربات چیت کرتے ہوئے انھوں نے کہا کہ ہم ایران کی مالیاتی صلاحیت کو اس طرح کا برا کردار جاری رکھنے کی اجازت نہیں دیں گے۔اس لیے ایرانی رجیم کے خلاف وسیع تر پابندیاں کی جائیں گی اور ان کا مقصد ایرانی رجیم کو یہ باور کرانا ہے کہ اس کا مخالفانہ کردار بالکل ناقابلِ قبول ہے اور اس کو اس کا بھاری خمیازہ بھگتنا پڑے گا لیکن ان پابندیوں کا ہدف ایرانی عوام نہیں ہوں گے۔مائیک پومپیو نے امارات کی قیادت سے ایرانی صدر حسن روحانی کی آبنائے ہرمز کو بند کرنے کی حالیہ دھمکیوں کے بارے میں تبادلہ خیال کیا ہے۔حسن روحانی نے گذشتہ ہفتے یورپ کے دورے کے موقع پر کہا تھا کہ اگر ایران کی تیل کی برآمدات میں رخنہ ڈالنے کی کوشش کی گئی تو پورے خطے کی برآمدات کو روک دیا جائے گا۔واضح رہے کہ آبنائے ہرمز سے دنیا کا ایک تہائی تجارتی مال اور تیل ہو کر گذرتا ہے۔مائیک پومپیونے اس کے ردعمل میں کہاکہ ایران کو یہ بات جان لینی چاہیے کہ امریکا آبی گذرگاہوں کو کھلا رکھنے کے لیے پْرعزم ہے۔وہ پوری دنیا کے لیے تیل کی دستیابی کو برقرار رکھنا چاہتا ہے۔یہ عشروں سے ہمارا عزم ہے اور ہم اس کو جاری رکھنا چاہتے ہیں۔امریکا ایران کے خلاف نئی سخت پابندیوں کے نفاذ پر غور کررہا ہے اور وہ اپنے اتحادیوں پر بھی زور دے رہا ہے کہ وہ ایران سے خام تیل کی درآمد بند کردیں ۔ ایسی اطلاعات منظرعام پر آنے کے بعد عالمی مارکیٹ میں تیل کی قیمتوں میں پہلے ہی اضافہ ہوچکا ہے۔امریکا کے اتحادیوں سعودی عرب ، متحدہ عرب امارات اور کویت نے وقتِ ضرورت اپنی پیداوار بڑھانے کا اعلان کیا ہے لیکن مبصرین کے مطابق عالمی مارکیٹ میں مستقبل میں طلب کے مقابلے میں تیل کی رسد میں کمی واقع ہوسکتی ہے۔امریکا میں تیل کی فی گیلن قیمت میں پہلے ہی 2.26 سے 2.86 ڈالرز کا اضافہ ہوچکا ہے اور امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ بہ ذات خود تیل برآمد کرنے والے ممالک پر زور دے چکے ہیں کہ وہ قیمت میں کمی کے لیے اپنی پیداوار بڑھائیں۔منگل کو امریکا میں خام تیل کے سودے 75 ڈالرز فی بیرل اور برینٹ نارتھ میں خام تیل کے سودے قریباً 80 ڈالرز میں ہوئے ہیں۔وائٹ ہاؤس کے حکام نے قبل ازیں یہ اشارہ دیا تھا کہ امریکا کے بعض اتحادیوں کو ایران سے پابندیوں کے بغیر تیل درآمد کرنے کی اجازت دی جا سکتی ہے لیکن وزیر خارجہ پومپیو کا کہنا ہے کہ تیل کی ایسی درآمد بھی پابندیوں کی زد میں آئے گی۔ہم ایسی پابندیوں سے استثنیٰ دینے پر غور کریں گے لیکن اس ضمن میں کوئی غلطی نہیں کریں گے۔ان کا کہنا تھا کہ ہم ایرانی قیادت کو یہ باور کرانے کے لیے پْرعزم ہیں کہ اس کے ضرررساں کردار پر کوئی انعام نہیں دیا جائے گا اور اس ملک میں اقتصادی صورت حال کو اس وقت تک درست طور پر جاری رکھنے کی اجازت نہیں دی جائے گی ، جب تک ایرانی ایک زیادہ معمول کی قوم نہیں بن جاتے ہیں۔

ہمارے بارے میں جاننے کے لئے نیچے دئیے گئے لنکس پر کلک کیجئے۔

ہمارے بارے میں   |   ضابطہ اخلاق   |   اشتہارات   |   ہم سے رابطہ کیجئے
© 2018 All Rights of Publications are Reserved by Daily Subh.
Developed by: SuperWebz.com
تمام مواد کے جملہ حقوق محفوظ ہیں © 2018 روزنامہ صبح۔